عالمی سفیر امن : شیخ الاسلام ڈاکٹر محمد طاہر القادری

تحریر : ڈاکٹر رحیق احمد عباسی (ناظم اعلیٰ، تحریک منہاج القرآن)

تاریخ انسانی نے بے شمار ایسی شخصیات کا مشاہدہ کیا ہے جنہوں نے انقلابی تحریکوں کی بنیاد رکھی۔ انقلابی تحریک ہمیشہ کسی زوال یافتہ قوم میں ہی شروع ہوتی ہے۔ مثبت انقلاب کا مقصد قوم کو زوال و اِنحطاط سے نکال کر عروج کے راستے پر گامزن کرنا ہوتا ہے۔ یہ بھی حقیقت ہے کہ دائمی حاکمیت صرف اﷲ تعالی کی ہے۔ دنیا کی ہر قوم کی تاریخ میں عروج و زوال کے مراحل آتے ہیں۔ حضور علیہ الصلوۃ و السلام کی بعثت ہوئی تو معاشرہ تاریکی، جہالت، لاقانونیت، جبر و استبداد کا شکار تھا۔ اُلوہی حکمت سے معمور عملی، نبوی تدبّر و تفکر اور آپ کے جانثار صحابہ کی جہد مسلسل نے تاریخ انسانیت میں ایک ا یسا باب رقم کیا جو چہار دانگ عالم کے لیے مینارہ رُشد و ہدایت ہے۔ اسلام کا سفر عروج، جس کی بنیاد حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے رکھی، اس سفر عروج کو آپ کے خلفاء راشدین نے کاملاً اور بعد ازاں امت مسلمہ کے علماء و مفکرین، صوفیاء و مبلغین، فقہاء و مجددین اور سلاطین و مجاہدین نے اپنے اپنے میادین میں جاری وساری رکھا اوراسلام نے دنیائے انسانیت کو Dark Ages سے نکال کر جدید سائنسی ترقی کی دہلیز پر لاکھڑا کیا۔ پھر تاریخ کا پہیہ چلا اور مسلمان آہستہ آہستہ اپنی کوتاہیوں، غلط حکمت عملیوں، باہم افتراق و انتشار، مصلحت کوشی، عیش پسندی، جہاد و اجتہاد سے کنارہ کشی اور رسولِ خدا صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اور دین مصطفوی سے دوری کی وجہ سے زوال کا شکار ہو گئے۔ یہاں تک کہ انیسویں صدی کے وسط میں برصغیر پاک و ہند میں اسلامی سیاسی عروج کی علامت ’’مغلیہ سلطنت‘‘ اور بیسویں صدی کے شروع میں عالمی سطح پر اسلام کی سیاسی قوت کی علامت ’’خلافت عثمانیہ‘‘ کا خاتمہ ہوگیا۔ اگرچہ اُس دور میں بہت سارے مفکرین اور تحریکوں نے ملت اسلامیہ کی ڈوبتی نیّا کو ساحل مراد تک پہنچانے کی کوشش کی مگر وقت کے دھارے کا رخ تبدیل نہ ہوسکا اور درجنوں مسلم ممالک آزاد ہونے کے باوجود اُمت سیاسی، تہذیبی اور اخلاقی حوالے سے زوال کی اتھاہ گہرائیوں میں گرتی ہی چلی گئی۔

اس پس منظر میں موجودہ دور امت کے زوال کا دور ہے، مسلمانوں کا اجتماعی تشخص نہ ہونے کے برابر ہے، اتحاد و اتفاق کی جگہ فرقہ واریت نے لے لی، امت کا ملی تشخص بری طرح مجروح ہو چکا ہے، ہماری اقدار و روایات پامال ہوتی چلی جا رہی ہیں، دین ومذہب پر عمل رسومات کی حد تک بھی باقی نہیں رہا، اسلامی ممالک میں حکمرانوں کا عوام کے ساتھ کوئی واسطہ ہے نہ اسلام کے ساتھ کوئی رشتہ۔ ہر طرف خوف و ہراس ہے، بے یقینی ہے، مایوسی ہے اور اس زوال و انحطاط سے نکلنے کی کوئی راہ بھی نظر نہیں آ رہی۔ ان مایوس کن حالات میں ہر صاحب درد مسلمان کادل خون کے آنسو روتا ہے۔ وہ کچھ کرنا چاہتا ہے مگر اسے راستہ نظر نہیں آتا۔ وہ جس طرف بھی روشنی دیکھ کر جاتا ہے قریب پہنچنے پر محض سراب سے سامنا ہوتا ہے۔

ایسے دور میں مسلمانوں میں سے بعض نے شکست خوردگی کو اپنا لیا، حالات سے سمجھوتہ کر لیا اور سمجھنے لگے کہ باہر جو کچھ بھی ہوتا ہے ہوتا رہے، ہمیں اپنا ایمان بچانے کی فکر کرنا چاہیے۔ جہاں تک ہو سکے دعوت و تبلیغ کا عمل جاری رکھا جائے۔ دور جدید میں نظام ہاے اسلام کی عملیت اور نتیجہ خیزی پر ایسے لوگوں کا یقین تقریباً ختم ہو گیا۔ اس سوچ نے اسلام کو مکمل دین کے بجائے ایک روایتی مذہب میں تبدیل کر دیا۔ یہ سوچ بلی کو دیکھ کر کبوتر کے آنکھیں بند کرنے کے مترادف ہے۔ شرکی طاقتیں جب جہاز کی رفتار سے سفرکررہی ہوں تو اُن کا مقابلہ سائیکل سوار اہلِ خیر کیسے کرسکتے ہیں؟

دوسری طرف کچھ لوگوں نے اعلائے کلمۃ اﷲ کا نعرہ بلند کیا ہے، غلبہ دین حق کی بحالی کی بات کی، اسلام کی سیاسی قوت کی ضرورت کو محسوس کیا۔ پھر انہوں نے دیکھا کہ مغرب کی تہذیب عصر حاضر پر غلبہ حاصل کیے ہوئے ہے، دنیا میں یورو، ڈالر اورپونڈ کا تسلط ہے تو انہوں نے یہ سمجھ لیا کہ یہ ساری کی ساری مغربی تہذیب اسلام کی دشمن ہے، لہٰذا جہاد وقت کی ضرورت ہے اور یہ کہ امت کا احیا مغرب کو نیست ونابود کرنے ہی سے ممکن ہے اس لیے اس کے خلاف علم جہاد بلند کیا جانا چاہیے۔ اس فکر پر گامزن لوگ جہاد اور قتال میں فرق بھول گئے، اسلام کی شرائط جہاد ان کی نظروں سے اوجھل ہو گئیں، جہاد کے آداب و لوازمات سے وہ بے خبر رہے، نتیجتاً اسلام کا جہاد جیسا اہم ترین نظریہ و ادارہ جہاد نہ رہا اور یہ فکر انتہا پسندی سے شروع ہو کر دہشت گردی سے گزرتے ہوئے خود کش حملوں تک پہنچ گئی۔ فوجی و سول شہریوںکا فرق مٹ گیا، سفارتی آداب کا احترام ختم ہو گیا، بچوں، عورتوں اور بوڑھوں کے بارے میں نرم دلی تک نہ رہی یہاں تک کہ مسلم اور غیر مسلم کا فرق بھی ختم ہو گیا۔

نتیجتاً وہ دین جو سلامتی کا پیغام لے کر آیا، امن کا پروگرام لے کر آیا، محبت کا مشن لے کر آیا، بقائے باہمی کا منشور لے کرآیا، احترام انسانی کا دستور لے کر آیا، دنیا اس کو نفرت، دہشت، انتہا پسندی، قتل و غارت گری اور خود کش حملوں کی علامت قرار دینے لگی۔

یہ ہیں وہ حالات جو پوری امت کے ساتھ ساتھ تحریک منہاج القرآن کو بھی درپیش تھے اور اس کے قائد شیخ الاسلام ڈاکٹر محمد طاہرالقادری نے حالات و حقائق کا بغور مطالعہ کیا۔ ڈاکٹر طاہر القادری کا خمیر انقلاب سے اٹھا تھا، ان کے والد گرامی نے ان کو شروع ہی سے خدمت دین کے لئے تیار کیا تھا۔ ان کے مطالعہ قرآن نے انہیں یہ فہم دیا کہ اسلام کا مقدّر بے بسی اور ذلت نہیں بلکہ عروج و تمکنت ہے۔ سیرتِ طیبہ کے مطالعہ نے ان کو وہ فہم دیا جو شاہراہ انقلاب کی طرف جاتا ہے جس کی منزل احیائے اسلام اور اقامت دین ہے۔ وہ یہ سمجھتے ہیں کہ انقلابی جدوجہد کے بغیر اسلام کے وجود کو قائم رکھنا ناممکن ہے اور حالات کے رخ کا دھارا بدلے بغیر دنیا میں کامیابی ممکن نہیں۔ محض دعوت وتبلیغ سے معاشرے کے حالات تبدیل نہیں کیے جا سکتے۔ اقامت دین کی جدوجہد ناگزیر ہے لیکن اقامتِ دین کیا ہے؟ بعض انتہا پسند طبقا ت نے اس سے مراد دنیا سے تمام ادیان کا خاتمہ لے لیا ہے اور ساری کی ساری انسانیت کو مسلمان بنانا اور دنیا سے غیر مسلموں کا خاتمہ سمجھ لیا ہے۔ یہی تصور ان کی گمراہی کا باعث اور پہچان بن گیا۔ ایسے لوگ اور تحریکیں انتہا پسندی اور دہشت گردی کے راستے پر چل پڑے۔ شیخ الاسلام ڈاکٹر محمد طاہر القادری کے نزدیک اس طرح کے خیالات کی گنجائش نہیں۔ ان کے ہاں اقامت اسلام کا مقصد امن عالم کا قیام ہے۔ وہ اسلام کو دینِ امن سمجھتے ہیں، دینِ محبت گردانتے ہیں، بقاے باہمی، تحمل و برداشت، احترامِ آدمیت، حرمتِ جانِ انسانی کو وہ بنیادی اسلامی شعائر سمجھتے ہیں۔ لہٰذا انہوں نے وہ کام کر دکھایا جو ناممکن نظر آتا تھا۔ انہوں نے انقلابیت اور امن پسندی کو ایک جگہ جمع کر دیا اور دنیا بھر میں ایک ایسی تحریک کی بنیاد رکھی جو اسلام کا عروج دیکھنا چاہتی ہے، اقامت دین جس کی منزل ہے، تجدید دین جس کا راستہ ہے، احیائے دین جس کا مشن ہے لیکن ان کی یہ تحریک دہشت گردی اور انتہا پسندی سے کلیتاً پاک ہے۔ اس تحریک کے نزدیک نفرت و تعصب پر مبنی نظریات کفر سے کم نہیں اور بے گناہ انسانیت کا قتل ظلمِ عظیم ہے، اس کے نزدیک احیائے اسلام کی منزل نفرت و تصادم سے نہیں بلکہ محبت و ہم آہنگی سے ہی حاصل ہو سکتی ہے۔

شیخ الاسلام کا یہ کارنامہ ایسے ہی تھا جیسے آگ اور پانی کو ایک جگہ جمع کر دینا۔ انہوں نے اسلام کا امن و محبت اور رواداری پر مبنی پیغام دنیا تک پہنچایا۔ اسلام پر فکری اور نظریاتی محاذوں پر ہونے والے حملوں کا جواب غصے اورجلال سے نہیں بلکہ علم اور دلیل کی زبان میں دیا۔ ابھی 9/11 کا حادثہ وقوع پذیر نہیں ہوا تھا لیکن نیو ورلڈ آرڈر کے تانے بانے میں آپ اس سازش کو دیکھ رہے تھے کہ اسلام کو دہشت گردی اور انتہا پسندی کے ذریعے بدنام کرنے کی عالمی سازش زوروں پر ہے۔ وہ 1999ء میں اوسلو ناروے میں عالمی امن کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے فرما رہے تھے :

"So this is just mention of what is the significance of peace in Islam. Islam, from the very beginning to its end, is peace and nothing else. Anything detrimental to peace, anything damaging to peace, anything conflicting to peace, anything contradictory to peace, it has no, absolutely no, concern with Islamic teachings. And whosoever may be, if he has any kind of terroristic character, extremistic character, any character detrimental to the welfare of humanity, any character detrimental to the global peace, any character detrimental to the societal peace of mankind, that is absolutely anti-Islam to our faith." (International Peace Conference, Oslo, Norway, 13 August)

’’یہ اسلام میں امن کی اہمیت کا بیان ہے۔ اسلام تو اوّل تا آخر امن ہے اور کچھ بھی نہیں۔ جو چیز بھی امن کے لیے نقصان دہ، امن سے متصادم اور امن کی مخالف ہے اس کا اسلامی تعلیمات سے قطعاً کوئی تعلق نہیں ہے۔ جس کسی کا بھی رویہ دہشت گردی، انتہا پسندی، انسانیت کی فلاح و بہبود کے لیے ضرر رساں ہو یا امن عالم اور عالم انسانیت کے لیے تباہ کن ثابت ہو، وہ ہمارے عقیدے میں مکمل طور پر غیر اسلامی ہے۔‘‘ (انٹرنیشنل پیس کانفرنس، اوسلو، ناروے، 13 اگست 1999ء)

اس سے بھی بہت قبل 1993ء میں اسلام کو درپیش خطرات کو محسوس کرتے ہوئے وہ اپنے انقلابی کارکنوں کو یہ نعرہ دے رہے تھے کہ انقلاب کے لیے شعور ضروری ہے اور شعور کی بیداری کے لیے علم کا فروغ اور جہالت کا خاتمہ ضروری ہے۔ لہٰذا جہالت کے خاتمے کی جدوجہد کرتے ہوئے تعلیمی ادارے قائم کیے جائیں لیکن وہ تعلیمی ادارے روایتی مدارس نہیں ہونے چاہییں بلکہ جدید تعلیمی نصاب کے حامل ادارے ہوں کیونکہ ایک طرف وہ دیکھ رہے تھے کہ دنیاوی علوم میں مہارت کے بغیر ترقی کا خواب ایک دیوانے کی بڑ ہی ہو سکتی ہے اور دوسری طرف ان کی نظر جہاں بیں دیکھ رہی تھی کہ مستقبل میں کس طرح مدارس کو دہشت گردی کے مراکز بنایا یا مشہور کیا جائے گا۔ ان کے اس تعلیمی منصوبہ کی وجہ سے منہاج القرآن وہ واحد دینی و تجدیدی تحریک ہے جس نے 572 تعلیمی اداروں کا نیٹ ورک قائم کیا اور ملک و قوم کو ایک باقاعدہ چارٹرڈ یونیورسٹی دی۔

تحریک کے آغاز میں ہی انہوں نے محسوس کر لیا تھا کہ انقلابی تحریک کو میانہ روی پر قائم رکھنا آسان نہیں۔ انہوں نے تاریخ میں متعدد دینی انقلابی تحریکوں کو بتدریج انتہا پسندی تک پہنچتے دیکھا تھا۔ انہوں نے ان کمزوریوں کا بھی تعین کر لیا تھا جو کسی انقلابی تحریک کو انتہا پسندی تک پہنچا دیتی ہیں۔ اگرچہ روحانیت اور عشق رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ان کو والد گرامی سے ورثہ میں ملا تھا مگر فکری سطح پر بھی وہ اس نتیجے پر پہنچ چکے تھے کہ عشق رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اور ادب و تعظیم رسالت کا جذبہ وہ قوت ہے جو کبھی انتہا پسندی کی طرف نہیں جانے دیتی کیونکہ محبت اور نفرت ایک جگہ اکٹھی نہیں ہو سکتیں۔ روحانیت و تصوف وہ طرزعمل اور طریقہ کار ہے جو انسانیت سے محبت کے درس پر مبنی ہے۔ لہٰذا انہوں نے اپنی تحریک کی فکری و نظریاتی بنیاد ہی تین عناصر۔ احیاء و اقامت دین، تصوف و روحانیت اور عشق رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم۔ پر رکھی۔ تاریخ کا مطالعہ کرنے والے جانتے ہیں کہ یہی وہ تین عناصر تھے جنہوں نے صحابہ کرام رضی اللہ عنھم کی جماعت کو ناقابل تسخیر بھی بنا دیا تھا اور ساتھ ہی محبت و امن کا عظیم داعی بھی۔ وہ جہاں جاتے لوگ ان کی قوت و دہشت سے نہیں بلکہ اخلاق و کردار کو دیکھ مسلمان ہوتے جاتے۔ لیکن جدید دنیائے اسلام اور موجودہ دور زوال میں جو چند صدیوں پر محیط ہے، ڈاکٹر طاہر القادری ہی وہ رہنما ہیں جنہوں نے کسی ایک تنظیم و تحریک اور جدوجہد و دعوت میں ان تین عناصر کو جمع کر دیا، وہ عناصر جنہوں نے احیائے اسلام کی ایک ایسی عظیم تحریک کی بنیاد رکھی جس کا مشن امن و محبت ہے۔

یہی وجہ ہے کہ جب 9/11 کے بعد ساری مذہبی قیادت ملا عمر اور اسامہ بن لادن کی ہمدرد بنی ہوئی تھی، جہاد کے نعرے لگ رہے تھے، دنیا سے امریکہ کے خاتمے کے دعوے ہو رہے تھے تو شیخ الاسلام پاکستان کے وہ واحد قائد تھے جو انتہا پسندی اور دہشت گردی کی اس فکر اور اس آواز کو اسلام کے خلاف سازش کا حصہ قرار دے رہے تھے۔ جب بے گناہ شہریوں، معصوم بچوں، بے بس عورتوں کی تمیز کے بغیر قتل و غارت گری کو جہاد کا نام دیا جا رہا تھا، تو وہ اس کو فساد قرار دے رہے تھے۔ اس کا اقرار برطانوی پارلیمنٹ بھی کیے بغیر نہ رہ سکی۔ برطا نوی پارلیمنٹ کے ہاؤس آف کامنز کی ڈیفنس کمیٹی نے اپنے سیشن 2002-2003 کی چھٹی رپورٹ میں بیان کیا :

Dr Qadri claimed that any terrorist act is against the basic precepts of Islam and that it does not allow aggression, oppression and barbarism in any event. And that there is a faction in the Islamic world whose interpretations of Islam are extremist in nature. Their handling of political, social and cultural matters reflect the extremist trend in their thinking. He stated that this extremist class believes that Islam is inconsistent with democracy and any association with democracy is forbidden .(Dr Muhammad Tahir-ul-Qadri, "Extremism : Causes and Cures", The Nation, December 14, 2001)

Criticising the extremist elements he stated that such groups present a horrifying picture of Islam in the Western world and provoke the religious sentiments of the people for their personal gains. Dr Qadri encouraged the Taliban to hand Osama bin Laden over to a third party, he suggested that such a role can be played by NATO, the European Union, or the Organisation of Islamic Conference (OIC). (Lecture delivered by Dr Tahir-ul-Qadri, "Terrorism & International Peace," September 2001, Pakistan)

’’ڈاکٹر طاہر القادری کا موقف ہے کہ دہشت پسندانہ کارروائی بنیادی اسلامی تصورات کے منافی ہے اور یہ کہ اسلام کسی صورت میں جارحیت، ظلم و زیادتی اور بربریت کی اجازت نہیں دیتا۔ مسلم دنیا میں ایک گروہ ایسے لوگوں کا ہے جن کی اسلام کے بارے میں تشریحات و توضیحات انتہا پسندانہ نوعیت کی ہیں۔ سیاسی، معاشرتی اور ثقافتی معاملات میں ان کا طرزِ عمل ان کی انتہا پسندانہ سوچ کا آئینہ دار ہے۔ موصوف کے بیان کی رو سے یہ انتہا پسندانہ جماعت اس امر پر یقین رکھتی ہے کہ اسلام کا جمہوریت سے کوئی تعلق و سروکار نہیں او رجمہوریت اس کے لیے شجر ممنوعہ کا درجہ رکھتی ہے۔

’’ڈاکٹر قادری نے ان انتہا پسند عناصر پر تنقید کرتے ہوئے بیان دیا کہ ایسے لوگ ہی مغربی دنیا میں اسلام کی گھناؤنی تصویر پیش کرتے اور اپنے ذاتی مفادات کے لیے عوام کے مذہبی جذبات کو مشتعل کرتے ہیں۔ ڈاکٹر موصوف نے طالبان کو یہ ہمدردانہ مشورہ دیا تھا کہ وہ اسامہ بن لادن کو کسی تیسرے فریق کے حوالے کر دیں۔ ان کی رائے میں اس طرح کا کردار نیٹو (NATO) یورپی یونین یا اسلامی سربراہی کانفرنس کی تنظیم (OIC) ادا کرسکتی ہے۔‘‘

اسی طرح تصوّف و روحانیت کے نظریہ اور احیاء و اقامت اسلام کی فکر کو ایک جگہ جمع کرنے پر ایک فرانسیسی یونیورسٹی کے اسکالر الیکس فلپین (Alix Pilippon) یوں رقم طراز ہیں :

"Qadri has reclaimed spirituality as the specific stamp of Islam and as the true representative of the subcontinent's cultural ethos, he is therefore very defensive. As far as Sufism is concerned, Mahfil-e-Sama (spiritual recitations) including qawwali, music and dhikr recitation are regularly held in the headquarters in Lahore.

Although critical of some ritualistic aspects of the cult of the saints, the members of MUQ do perform ziyarat, tomb visitation, which is, to them, the granite foundation of the beliefs of the Ahl-e-Sunnah. The values of peace, love, tolerance and brotherhood, identified as Sufi, are promoted as universal references informing the ideology and the modes of action of the organization. The great Sufis are perceived as role models and mysticism as a tool to be used for the ethical reformation of the people in order to bring peace, harmony, and humanism in society.

The ideological system of MUQ has been established on the basis of a critical approach to Islamism in its relation with Sufism. It shows an awareness of the fact Sufism has been excluded from the symbolic resources of Islam by many Islamists. It also acknowledges the corruption within some Sufi practices and the necessity to come out from traditional institutions and evolve a modern form of organization. It is critical of the doctrines and actions of extremism and has taken into account the way this category of Islamists has shaped western opinion on Islam. In other words, it has rationalized the terms of the heated ongoing debate about Islam, modernity, and the West and tried to evolve a suitable alternative evolving Sufism as a cultural, ethical, intellectual and political resource for the Muslim world." (ISIM Review, 17/spring 2006)

’’قادری صاحب برصغیر کے اخلاقی کلچر کے حقیقی نمائندہ کے طور پر روحانیات کو اسلام کی مخصوص علامت سمجھتے ہیں۔ لہذا تصوّف کے حوالے سے وہ مدافعتی رویہّ رکھتے ہیں۔ لاہور میں انکے مرکز پر محافل سماع بصور ت قوالی اور محافل ذکر منعقد کی جاتی ہیں۔

’’تصوّف کے چند روایتی پہلوؤں پر ناقدانہ رائے کے باوجود تحریک منہاج القرآن کے اراکین صوفیاء کے مزارات کی زیارت کے لیے جاتے ہیں۔ وہ اسے اہل سنت کے اعتقاد کی پختہ بنیاد قرار دیتے ہیں۔ امن، محبت، برداشت اور بھائی چارے جیسی اقدار کو تصوّف کی بنیادی علامات قرار دیتے ہوئے ان کا عالمی سطح پر پرچار منہاج القرآن کے نظریہ اور طریقہ کار کے طور پر کیا جاتا ہے۔ ان کے ہاں معاشرے میں افراد کی اخلاقی اصلاح، امن، ہم آہنگی اور احترام انسانیت لانے کے لیے عظیم صوفیاء مینارہ نور کی حیثیت رکھتے ہیں جبکہ روحانیت اس کا ایک بہترین ذریعہ ہے۔

’’اسلام اورتصوّف کے باہمی تعلق کے حوالے سے منہاج القرآن کا نظریاتی نظام ناقدانہ اپروچ پر تشکیل دیا گیا ہے۔ وہ اس حقیقت سے آگہی رکھتا ہے کہ اسلام پسندوں نے تصوّف کو اسلام کے علامتی ذرائع سے الگ کردیا ہے۔ وہ ان متصوفین کے چند اعمال کی کرپشن کو بھی تسلیم کرتا ہے اور روایتی خانقاہوں سے نکل کر جدید تنظیم کی تشکیل کی ضرورت کو بھی بیان کرتا ہے اور ساتھ ہی انتہا پسندگروہ کی فکر اور اقدامات پر اس کا انداز ناقدانہ ہے اور ان کے خیال میں اسی قسم کے اسلام پسندوں نے اسلام کے بارے میں مغرب کی رائے کو تبدیل کیا ہوا ہے۔ دوسرے الفاظ میں اس نے اسلام، جدیدیت اور مغرب کے حوالے سے موجودہ جاری بحث کے نکات کو عقلی توجیہہ دی ہے اوردنیائے اسلام کی ثقافتی، اخلاقی، فکری و سیاسی اصلاح پسندی کے لیے اس نے تصوّف کو موزوں ترین متبادل کے طور پر متعارف کروایا ہے۔‘‘ (آئی ایس آئی ایم ریویو نمبر 17/ بہار 2006ء)

جس وقت تحریک منہاج القرآن کی بنیاد رکھی جا رہی تھی اس وقت ملک میں فرقہ واریت کا دور دورہ تھا۔ دینی جماعتیں اور مذہبی تنظیمیں بھی فرقہ کی بنیاد پر قائم تھیں۔ شرک و بدعت، گستاخی و بے ادبی اور کفر و فسق کے فتوے عام تھے۔ مسلمان آپس میں نفرت و عداوت کا شکار تھے۔ ایسے میں آپ نے تحریک کی بنیاد رکھتے ہوئے اعلان کیا کہ منہاج القرآن کسی فرقہ کے لیے نہیں بلکہ اسلام کے لیے قائم کی جا رہی ہے اور اس کے دروازے سارے مسلمانوں کے لیے کھلے ہوئے ہیں اور آپ نے اُمت کو مشترک نکات پر زور دینے اور اختلافات کو نظر انداز کرنے کی فکر دی۔ امتِمسلمہ کو فرقہ واریت کے عذاب سے نکال کراتحاد واتفاق اور تحمل و برداشت کی راہ پر گامزن کرنے میں بھی آپ کے خطابات و تصانیف نے اہم کردار ادا کیا۔

پاکستان میں جب مسلم مسیحی فسادات اٹھ کھڑے ہوئے تو شیخ الاسلام مسلم کرسچن ڈائیلاگ فورم (MCDF) کا قیام عمل میں لائے اور جامع مسجد منہا ج القرآن میں مسیحی وفد کو عبادت کی اجازت دے کر اور مرکزی سیکرٹریٹ پر کرسمس کی تقریب کا آغاز کر کے دنیا کو اسلام کا ایک ایسا رخ دکھا یا جو اس سے پہلے نظروں سے اوجھل تھا۔ اس وقت ڈاکٹر طاہر القادری چونکہ پاکستانی سیاست میں سرگرم تھے اس لیے کچھ لوگوں نے اس کو سیاسی اقدام قرار دیا مگر بعدازاں اسمبلی رکنیت سے استعفیٰ اور پاکستان عوامی تحریک (PAT) کی عملی انتخابی سیاست سے علیحدگی کے باوجود ہر سال مرکزی سیکرٹریٹ پر کرسمس کی تقریب جاری رکھنا ڈاکٹر طاہر القادری کے اس عزم کا مظہر ہے کہ اسلام کو اس وقت پوری دنیا میں دشمنوں کی نہیں، بہی خواہوں اور دوستوں کی ضرورت ہے اور تہذیبی تصادم اسلام کے لیے فائدہ مند ہے نہ انسانیت کے لیے۔ آج سے8 سال قبل کے اُ ن کے اس اقدام کوعالمی سطح پر پذیرائی ملی۔ دنیا بھر میں صرف منہاج القرآن کی ہی تنظیمات نے اس سلسلے کو آگے بڑھایا اور پاکستان میں بھی یہ سلسلہ فروغ پذیر ہوا۔ اس سال کرسمس کے موقع پر اخبارات میں بے شمار مسلم تنظیموں، جماعتوں اور سیاسی قیادتوں جن میں مذہبی و دینی رہنما و جماعتیں بھی شامل ہیں، کی کرسمس کیک کاٹنے کی خبریں اور تصادیر شائع ہوئیں۔ یہ وہ پس منظر تھا جس میں پاکستان کی مسیحی تنظیموں نے پہلے اُن کو Christ of Earth کا لقب دیا اور بعد ازاں مسیحوں کی نمائندہ تنظیم NCIDE نے آپ کو ’’امن ایوارڈ‘‘ بھی دیا۔ اسی طرح برطانوی فارن آفس اور یورپی یونین نے مل کر استنبول میں مسلم آف یورپ کانفرنس کا اہتمام کیا جس کا مقصد یورپ میں رہنے والے مسلمانوں کے چیلنجز اور مسائل کو زیر بحث لانا تھا، تو پوری دنیائے اسلام کے جید علماء اور امریکہ و یورپ کی یونیورسٹیز کے ساٹھ سے زائد پروفیسرز میں سے جس شخصیت کا انتخاب بطور Key Note Speaker کیا گیا تھا وہ ڈاکٹر طاہر القادری ہی تھے۔

آپ کی عالمی سطح پر امن و محبت کے فروغ کی کاوشوں اور تحریکی کارکنوں کو امن پسند اور انسانیت دوست رکھنے پر محنت اور فکری اہتمام ہی کا نتیجہ ہے کہ منہاج القرآن دنیائے اسلام کی سب سے زیادہ نیٹ ورک رکھنے والی، 100 سے زیادہ ممالک میں وجود رکھنے والی، پچاس ممالک میں اسلامک سنٹرز رکھنے والی اور دنیا بھر میں ممبران، رفقاء، وابستگان اور محبان کی Millions میں تعداد رکھنے والی واحد تنظیم ہے لیکن اس ساری مقبولیت اور نیٹ ورک کے باوجود اِس پُرآشوب دور میں احیائے اسلام کی فکر پر سودے بازی کیے بغیر کسی بھی تصادم، انتہا پسندی کا شکار نہیںہوئی بلکہ امن و محبت، رواداری، بقاے باہمی اور تحمل و برداشت کے رویوں کو پروان چڑھانے والی تحریک کے طور پر تسلیم کی جاتی ہے اور دنیا اسلام کو دینِ امن و محبت کے طور پر ماننے پر مجبور ہو رہی ہے۔ سو شیخ الاسلام ڈاکٹر طاہر القادری کو عالمی سفیر امن کہنا ہرگز مبالغہ نہیں۔


Your Comments

منہاج القرآن
منہاج ویلفئیر
منہاج اوورسیز
پاکستان عوامی تحریک
اسلامک لائبریری
عرفان القرآان
خطابات
ماہنامہ منہاج القرآن
ماہنامہ دختران اسلام
کاپی رائٹ © 1994 - 2019 منہاج القرآن انٹرنیشنل. جملہ حقوق محفوظ ہیں.